Saturday, January 16, 2021

Social Interactions of Eid through Poetry

What a mournful separation of the family members after partition depicted through poetry. Note the following message of eid Mubarak and its poetic response by members of the family across the divide. Also note the level of education in 1950s and the ability of educated to express through poetry their feelings and experiences. Today educated can't even read poetry, let alone compose it. 

Picture of a page from diary of my paternal grandmother capturing the poetic exchange between two of her cousins across the border. 

See also: Fatima Khatoon's depiction of separation of family members in a beautiful nazm. See this link.

1950-09-19

 برادر نثار حیدر کی نہٹور (بجنور، انڈیا) سے عید کی مبارکباد جس میں اپنا وطن چھوڑ کر پاکستان چلے جانے والوں کے لئے پیغام ہے- ان کی کزن وحیدہ کی طرف سےکراچی، پاکستان سے جواب-

انوار فاطمہ (والدہ احسان حید) کی کاپی /ڈائری میں ان کے ہاتھ سے لکھا ہوا ہے - نثار حیدر اور وحیدہ دونوں انوار فاطمہ کے کزنز ہیں-

ستمبر 19 سن 1950 میں نہٹور سے نثار حیدر:

غربت سے بہی فزوں ہے یہ اپنے وطن کی عید

اہل چمن ہیں جب نہیں پھر کیا چمن کی عید

پروانہ ہائے خاک وطن بے قرار ہیں

جب شمع انجمن نہ ہو کیا انجمن کی عید

 ان کی کزن وحیدہ کا پاکستان سے جواب:

اپنا وطن وہی ہے کہ عزت جہاں ملے

بے خوف و بے خطر ہو ہراک مردو و زن کی عید


آجا! کہ چشمہائے عزیزاں ہیں شرف راہ

تجھ بن تھی اون کی عید بھی رنج و محن کی عید


اپنا چمن بھی چھوڑا خیاباں بھی چھٹ گیا

جب گل کو راس آئی نہ اپنے چمن کی عید


No comments:

Post a Comment