Wednesday, January 27, 2021

Shajra Taxonomy of Sufi Tassauf Terminology

 شجرہ معرفت الہی و حقیقت روح و صراحت عالمہائے ظاہری و باطنی و طریقہائے تصوف متعلق نور ایمان


سید اکرام حیدر ترمذی نقشبندی کے کاغذات کا کلیکشن. سنہ 1880-1890
1. اللہ تعالٰی ازلی و ابدی، قیود زمان و مکاں سے مبرا
1.1 خدا خود آیندہ، موجود بالذات
1.2 واجب الوجود، واجب بالذات
2. قدرت کاملہ
3. کن
پانی، ہوا، عرش، کرسی، لوح، قلم، تقدیر، ایام، عالم، روح، مادہ
3.1 عالمہائے صراحت
عالم جبروت، عالم ملکوت، عالم لاہوت، عالم ناسوت، عالم برزخ (صغریٰ و کبرا)، عالم روح، عالم امکاں، عالم جسم، عالم زات
3.2 ذکر و شغل
3.2.1 صراحت نور ایمان
عین الیقین، حق الیقین، علم الیقین، جہل الیقین (کافر)
3.2.2 طریقہائے فنا
فنا فی اللہ، فنا فی الرسول، فنا فی الشیخ
3.3 صراحت تصوف
3.3.1 کمالات و کرامات (صوفی)
جمالی (نسجر و رحوع خلق؟؟ ) ، جلالی
3.3.2 اہل شہود
ہمہ از اوست
3.3.3 اہل وجود
ہمہ اوست
3.4 صراحت روح (قل الروح من امر ربیی)
3.4.1 ااقسام روح
سیلانی، مقامی، ملکوتی، شیطانی
3.4.2 نوعیت روحانی
3.4.2.1 نباتاتی (آٹھ)
3.4.2.2 طبعی
3.4.2.3 نفسانی
مدرکہ (حواس ظاہری و باطنی)
محرکہ (باعثہ،فاعلہ)
3.4.2.4 حیوانی
بارہ قوتیں: پانچ حواس باطنی (حافظہ، تواہمہ، ،حس سرک، خیال) ، پانچ حواس ظاہری (سامعہ، زائقہ، ، قوت شہوانی، قوت عقیدہ
آٹھ خادم: جازبہ، ماسکہ،ہاضمہ، ممیزہ، ذایقہ، مصورہ،مولدہ، متنمہ؟ قنسمہ(؟)
Mahmood Zaidi
's note on this شجرہ :
یہ تمام اصطلاحات صوفیا کے یہاں رائج ہیں، ہر ایک اپنے اندر ایک جہان سمیٹے ہوئے ہے،
سرسری تم جہان سے گذرے
ورنہ ہر جا ، جہان دیگر تھا
درجنوں ماہرین فلسفہ و منطق نے سینکڑوں کتب اس میں سے ہر موضوع پر علیحدہ علیحدہ لکھ دی ہیں، پھر حسب استعداد و فہم و ادراک ان کی مخالفت اور تصدیق میں بے شمار کتب لکھی گئیں، صوفیا کا معاملہ اس لیئے مختلف رہا کہ وہ براہ راست تربیت لیتے اور سینہ بہ سینہ اس علم کو منتقل کرتے رہے، حافظ ابن قیم کی تصنیف کتاب الروح ہو ، امام محمد الغزالی رح کی کیمیائے سعادت ہو، علامہ محمد اقبال رح کی الہامی شاعری ہو، رومی، حالی، جامی، سعدی، اور بعض صورتوں میں مرزا اسد الله خان غالب کے اشعار ہوں ۔۔۔۔ مثلاً ۔۔۔
کچھ نہ تھا تو خدا تھا، کچھ نہ ہوتا تو خدا ہوتا
ڈبویا مجھ کو ہونے نے، نہ ہوتا میں تو کیا ہوتا
یہ مسائل تصوف یہ تیرا بیان غالب
تجھے ہم ولی سمجھتے جو نہ بادہ خوار ہوتا
وغیرہ وغیرہ ہوں۔۔۔۔۔
یہ سب ذخیرہ پڑھنے کے لیئے عمر تھوڑی ہے اور اب اس میں برکت ناپید۔۔۔
یہ عمر گریزاں کہیں ٹھہرے تو یہ جانوں
ہر حال میں مجھ کو یہی لگتا ہے کہ' تم' ہو
بہرحال، راہ سلوک کی منازل ہوں، تزکیہ کا باب ہو، صفائی قلب ہو، حواس ظاہری یا باطنی ہوں ، فنا بالذات ہو، نفی ذات ہو، مکاشفہ ہو، جبلت انسانی و حیوانی ہو، انتقال روح ، جبروت ، ملکوت ، لاہوت، ناسوت. ، عالم ارواح، عالم دنیا، عالم لا مکاں و ساعہ، چار سمتوں سے ستائیس سمتوں تک کا سفر، مرکب انسانی، کیمیا ، قوت رحمانی، روحانی، شیطانی، جمال، جلال، کمال، عین الیقین سے حق الیقین تک کا مرحلہ وار اور دیوانہ وار سفر، ہمہ اوست پھر ہمہ از اوست، وحدت الوجود، عرفان الٰہی، یہ سب علوم اسرار ہیں، علوم لدنی ہیں، اس کی ابتدا سورہ کہف میں موسیٰ و خضر کے قصہ میں موجود ہے، نہ جانے ابتدا کیا ہے اور انتہا کیا ہے۔۔۔۔
فلسفی کو بحث کے اندر خدا ملتا نہیں
ڈور کو سلجھا رہا ہے اور سرا ملتا نہیں
جو صفحہ آپ نے یہاں بھیجا ہے ، اس کے مندرجات کسی صوفی بزرگ کے مشاہدات، تجربات، مکاشفات، الہام اور مجاہدہ کا نتیجہ معلوم ہوتے ہیں، فیسبک پر ان میں سے کسی ایک اصطلاح پر بھی مکمل لکھنا ممکن نہیں، شاید بالمشافہ گفتگو یا کسی آن لائن سیشن میں کبھی کچھ گفتگو ہو پائے۔۔۔
والله اعلم بالصواب۔۔۔

Wednesday, January 20, 2021

Ausaf Husain

Syed Ausaf Hussain Marhoom: On 18th January, Ausaf Bhai left for heavenly abode. A wrangler in true sense and a man of high principles. The way he carried himself, no one could gauge his true age. I remember sharing an anecdote with us that he once he visited a hakeem. Hakeem sb as per practice took the pulse and said asked what was Ausaf bhai age. Ausaf bhai replied either 72 or 79, I cannot remember. Hakeem sb got furious and said that do not joke and that Ausaf bhai must be in 50's. A solid person on whom you could rely upon in times of need. Irfan, Sara and Khurram can dwell more on Ausaf bhai personality. May Allah grant Jannah to Ausaf bhai and buland his darajats. Ameen

In the words of Ammi Jan (Huzabra Ahsan Hyder) he was internally a very deeply religious  which was not typically visible from outside. His apparent strictness emanated from a very strong adherence to the principles of honesty, commitment to the given word, punctuality, integrity, legal process, prompt action. He would get angry when we would be late, not adhere to the stated plan, or procrastination. He would say out what is in his heart and would call a spade as spade irrespective of whether people will like it or not. His maintenance of records of financial transactions was meticulous. All receivables, payable, receipts, payments records with every party were maintained in an immaculate manner going back to decades. It was a very hard struggle for survival battle that he waged every day after the death of his father. It took him around 20 years to rise from the ranks to the officer level in airforce in 1970, a feat that was achieved only by him in his batch. For this he had to excel in not only operations but also to distinguish himself as a marksman, expert in handheld arms and hand combat, judo and as a commando. His insistence on making everyone understand and remember each and every instruction by repeated reminders is exemplary. This struggle for excellence defined his personality. After retirement he excelled in everything he did. Whether in learning the protocol duties, security business. He had over 100 items published in various newspapers on home security, self security, organizational safety and security issues. He became a member of an international safety and security association and used to subscribe to its monthly magazine which he would read diligently from end to end and apply it in various companies. He was among the early adopters of technology. He professionally started using his email freelance_ausaf@hotmail.com much before others. He was using PowerPoint in late 1990s. He had a blackberry and was using group sms. I learned how to use sms for eid baqreid messages. He had a functional website much before I made one....

Saturday, January 16, 2021

Social Interactions through Poetry

What a mournful separation of the family members after partition depicted through poetry. Note the following message of eid Mubarak and its poetic response by members of the family across the divide. Also note the level of education in 1950s and the ability of educated to express through poetry their feelings and experiences. Today educated can't even read poetry, let alone compose it. 

Picture of a page from diary of my paternal grandmother capturing the poetic exchange between two of her cousins across the border. 

See also: Fatima Khatoon's depiction of separation of family members in a beautiful nazm. See this link.

1950-09-19

 برادر نثار حیدر کی نہٹور (بجنور، انڈیا) سے عید کی مبارکباد جس میں اپنا وطن چھوڑ کر پاکستان چلے جانے والوں کے لئے پیغام ہے- ان کی کزن وحیدہ کی طرف سےکراچی، پاکستان سے جواب-

انوار فاطمہ (والدہ احسان حید) کی کاپی /ڈائری میں ان کے ہاتھ سے لکھا ہوا ہے - نثار حیدر اور وحیدہ دونوں انوار فاطمہ کے کزنز ہیں-

ستمبر 19 سن 1950 میں نہٹور سے نثار حیدر:

غربت سے بہی فزوں ہے یہ اپنے وطن کی عید

اہل چمن ہیں جب نہیں پھر کیا چمن کی عید

پروانہ ہائے خاک وطن بے قرار ہیں

جب شمع انجمن نہ ہو کیا انجمن کی عید


 ان کی کزن وحیدہ کا پاکستان سے جواب:

اپنا وطن وہی ہے کہ عزت جہاں ملے

بے خوف و بے خطر ہو ہراک مردو و زن کی عید


آجا! کہ چشمہائے عزیزاں ہیں شرف راہ

تجھ بن تھی اون کی عید بھی رنج و محن کی عید


اپنا چمن بھی چھوڑا خیاباں بھی چھٹ گیا

جب گل کو راس آئی نہ اپنے چمن کی عید


Saturday, January 2, 2021

Elegy on the Killing of PM Liaquat Ali Khan by Shah Abdul Shakoor Faridi


مرثیہ ترجیح بند در شہادت لیاقت علیخان
بر بند سعدی علیہ الرحمہ
از شاہ عبد الشکور فریدی، مانک پور

یہ مرثیہ ایک ١٩٥١ کےخط میں ملا جو کہ شاہ عبد الشکور ساکن مانک پور کا بھیجا ہوا تھا-
 شاہ عبد الشکور فریدی میری والدہ کے نانا تھے- بڑے بزرگ تھے- ان کے منظوم ملفوظات میرے پاس کچھ موجود ہیں- ان کے مزار پر اب بھی عرس ہوتا ہے- ان کے کئی خطوط میرے پاس ہیں- پارٹیشن کے بعد ان کے خاندان کے اکثر لوگ ہجرت کر کے پاکستان آ گئے مگر انہوں نے اپنے آباؤاجداد کے قصبہ کو چھوڑنا مناسب نہ سمجھا- وہ وہاں اکیلے ایک دو افراد کے ساتھ رہ گئے- ان کی ایک بیٹی عائشہ فریدی(میری والدہ کی خالہ) ان کے ساتھ رہا کرتی تھیں جن کے تواتر سے دلخراش خطوط میری والدہ کے پاس آیا کرتے تھے جو کہ ان کے انتقال  1967-68 تک آتے رہے- ان خطوط میں شاہ عبد الشکور فریدی کے منظوم ملفوظات بھی ہوتے تھے- ان کا کچھ دیوان ہمارے ایک عزیز کے پاس ہے
درج زیل اردو ترجمہ از Mahmood Zaidi  بصد شکریہ:

تو ایک عالم کا دوست ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صرف تیری آنکھیں تیرے خون کی گواہ ہیں

اے بے بس تیرا دل خون سے تر ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا جانوں تیرے قرابت داروں پر کیا گذر رہی ہے 

مار ڈالا تو نے اس مقتول کو
اے،  شقی، بزدل اور نااہل گدھے

تم آج بخوشی مرتضیٰ کے دروازے پر پہنچے ہو
مگر ہم یہاں آہ و فریاد کررہے ہیں 

اے بے بس تیرا دل خون سے تر ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا جانوں تیرے قرابت داروں پر کیا گذر رہی ہے

کہاں ہو تم اے لیاقت علی خان۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خاک کے نیچے چھپا کب ظاہر ہوتا ہے، 

تم کہ ایک مہر تاباں تھے۔   
دنیا تمہیں کھو کر اب گریہ کناں ہے۔۔۔

اے بے بس تیرا دل خون سے تر ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا جانوں تیرے قرابت داروں پر کیا گذر رہی ہے

تمہاری موت لوگوں کو تتر بتر کرنے کا ایک طریقہ ہے
یقیناً یہ چرخ والوں کا فتنہ ہے۔۔۔۔

جب تک تم خون میں ڈوب نہ جاؤ
ان کا مقصد کیسے پورا ہوسکتا تھا۔۔۔

اے بے بس تیرا دل خون سے تر ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا جانوں تیرے قرابت داروں پر کیا گذر رہی ہے

شہادت نعمت حق کے سوا کچھ نہیں 
اور یہ صبر کرنے والوں کی صفات کا مظہر بھی 

بے شک یہ مومن کے لیئے خوش خبری ہے۔۔۔
فریدی مگر تم سے یہ غم چھپائے نہیں چھپتا۔۔۔

اے بے بس تیرا دل خون سے تر ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا جانوں تیرے قرابت داروں پر کیا گذر رہی ہے